ڈالر کے مقابلے میں روپیہ بلند ترین سطح پر 12

ڈالر کے مقابلے میں روپیہ بلند ترین سطح پر


انٹر بینک میں ٹریڈنگ کے دوران پاکستانی روپے کی قدر میں امریکی ڈالر کے مقابلے 0.61 فیصد اضافہ ہوگیا ہے گزشتہ روز ڈالر 154 روپے 0.03 پیسے کی سطح پر بند ہوا تھا جو آج 153 روپے 10 پیسے کی سطح پر آگیایہ پچھلے دو سالوں میں ڈالر کے مقابلے میں روپے کی سب سے زیادہ ویلیو ہے. خیال رہے کہ مارچ سے اب تک روپے کی قدر میں امریکی ڈالر کے مقابلے 5 روپے یا 3.

27 فیصد کا اضافہ ہوچکا ہے اس وقت پاکستانی روپیہ جون 2019 کے بعد 22 ماہ کی بلند ترین سطح پر ٹرینڈ کررہا ہے اس سلسلے میں فاریکس ایسوسی ایشن آف پاکستان کے صدر ملک بوستان نے کہا کہ عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) پروگرام کی بحالی اور ان کے بورڈ کی جانب سے 50 کروڑ ڈالر قرضے کی منظوری نے روپے کو مدد فراہم کی.انہوں نے کہا کہ اس سے بھی زیادہ یہ دیگر کثیر الملکی اداروں جس میں عالمی بینک کی جانب سے ایک ارب 30 کروڑ ڈالر نے بنیادی اصولوں کو مزید بہتر بنایا مارکیٹ کے رجحان کے بارے میں بات کرتے ہوئے ملک بوستان نے کہا کہ کہ طلب میں خاصی کمی ہے اور یہ زیادہ تر بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے والے طلبا کی تعلیم سے متعلق وجوہات کی بنا پر کارفرما ہے. انہوں نے کہا کہ تاہم ڈالر کی فراہمی کی بھی کثرت ہے اور صرف ایکسچینج کمپنیاں اپنے کاﺅنٹرز پر 70 سے 80 لاکھ ڈالر یومیہ وصول کررہی ہے اور پھر یہ لیکویڈیٹی انٹربینک مارکیٹ میں جمع کروائی جاتی ہے ملک بوستان نے روپے کی قدر میں حالیہ بہتری کی ایک وجہ روشن ڈیجیٹل اکاﺅنٹس کو بھی قرار دیا.دوسری جانب ایکسچینج کمپنیز ایسوسی ایشن پاکستان کے سیکرٹری جنرل ظفر پراچہ نے بھی ان کے اس موقف کی تائید کی انہوں نے کہا کہ اسٹیٹ بینک کے منصوبے اب ثمر آور ہورہے ہیں اور باضابطہ ذریعوں سے بڑی تعداد میں ٹرانزیکشنز ہورہی ہیں.

50% LikesVS
50% Dislikes

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں